انٹرنیشنل بے عزتی کے بعد عمران خان کا کلپ ویڈیو میں شامل

انٹرنیشنل بے عزتی کے بعد عمران خان کا کلپ ویڈیو میں شامل

پاکستان کے 76 ویں یوم آزادی پر پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے 1992 کے ورلڈکپ جیتنے والے کپتان عمران خان کو اپنی ویڈیو سے ڈراپ کر کے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر (ایکس) پر ایک ویڈیو شیئر کی جو چند ہی لمحوں میں کرکٹ کے مداحوں کی جانب سے شدید تنقید کی زد میں آگئی۔

تقریباً تمام شعبہ ہائے زندگی، سابق کھلاڑیوں، صحافیوں اور سیاسی کارکنوں کی جانب سے سوشل میڈیا پر تین دن تک شدید تنقید کے بعد، بالآخر پاکستان کرکٹ بورڈ نے بدھ کی رات ایک ویڈیو جاری کرکے واقعے کی وضاحت کرنے کی کوشش کی۔

یہ بھی پڑھیں: بجلی کا بل چیک کرنے کا طریقہ

نئی ویڈیو میں واضح طور پر 1992 کی فاتح ٹیم کے کپتان عمران خان کو دکھایا گیا ہے۔ ویڈیو میں 1992 کے ورلڈ کپ کی جیت کی جھلکیاں دیکھائی گئی ہیں جس میں عمران خان کو چار بار نمایاں طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ نے ٹوئٹر ہینڈل پر ویڈیو شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ‘پی سی بی نے تشہیری مہم شروع کر دی ہے جو چیمپئنز ٹرافی 2023 تک چلے گی`۔

مہم کی ایک ویڈیو 14 اگست 2023 کو سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کی گئی تھی۔ ویڈیو کو اس کی طوالت کی وجہ سے مختصر کر دیا گیا تھا، اہم کلپس کو کاٹ کر مکمل ویڈیو میں درست کر دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ پی سی بی کی جانب سے یوم آزادی کے موقع پر جاری کی گئی ویڈیو میں 1952 سے پاکستان کرکٹ سے متعلق تاریخی اور اہم واقعات کے مناظر کو ویڈیوز اور تصاویر کی صورت میں دکھایا گیا تھا۔

ویڈیو میں 1992 کے ورلڈ کپ کے مناظر بھی تھے لیکن پاکستان کے واحد ون ڈے ورلڈ کپ جیتنے والے کپتان عمران خان کو ویڈیو میں نہیں دکھایا گیا۔ بظاہر ویڈیو سے عمران خان کے کلپس کو جان بوجھ کر ہٹا دیا گیا تھا۔ جب سے یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر شیئر ہوئی ہے، پی سی بی شدید تنقید کی زد میں آگیا ہے۔

پی سی بی کی جانب سے شیئر کی گئی نئی ویڈیو پر تبصرہ کرتے ہوئے ٹوئٹر صارف مقدّس فاروق اعوان لکھتے ہیں کہ ‘مقامی نہیں بین الاقوامی بے عزتی کا اثر ہوا، مستقبل میں ایسے گھناؤنے رویے سے گریز کریں۔’ فریحہ ادریس نے تبصرہ کیا کہ ‘آخر میں یہ سمجھداری سے کیا گیا ہے’۔

نواز نامی صارف نے 1992 کے ورلڈ کپ کی ٹرافی کے ساتھ عمران خان کی تصویر شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ’سافٹ ویئر کو اپ ڈیٹ کر دیا گیا ہے‘۔

عمران افضل راجہ نامی صارف نے لکھا کہ ‘اچھے سافٹ ویئر لوگوں کو اپ ڈیٹ کرتے ہیں۔ ادے توساں کاکے۔ بھٹو ویڈیو میں شامل ہے، صرف 92 ورلڈ کپ جیتنے والے کپتان کو غلطی سے باہر کیا گیا ہے؟ کیا تم نے عوام کو چیونٹیوں کو سمجھا ہے؟۔

اختر جمال نے لکھا کہ سافٹ ویئر کو کامیابی سے اپ ڈیٹ کیا گیا۔ سیاسی اختلافات اپنی جگہ لیکن پاکستان میں عمران خان سے بڑا کھلاڑی کوئی نہیں۔ بات یہیں ختم ہو جاتی ہے۔

واضح رہے کہ بدھ کو پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور لیجنڈری فاسٹ بولر وسیم اکرم نے پی سی بی کی متنازع ویڈیو پر تنقید کرتے ہوئے اسے حذف کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

وسیم اکرم نے بدھ کو اپنی ٹوئٹ میں پی سی بی کو آڑے ہاتھوں لیا اور کہا کہ ‘ایک طویل پرواز کے بعد سری لنکا پہنچنے کے بعد جب میں نے پاکستان کرکٹ کی تاریخ پر پی سی بی ویڈیو کو دیکھا تو مجھے اپنی زندگی کا سب سے بڑا جھٹکا لگا۔ پی سی بی کی مختصر ویڈیو دیکھی جس میں عظیم عمران خان شامل نہیں تھے۔ سیاسی نظریات سے بالاتر ہو کر عمران خان کرکٹ کی دنیا کے آئیکون ہیں اور انہوں نے اپنے دور میں پاکستان کو ایک مضبوط ٹیم بنایا اور ہمیں راستہ دکھایا۔

وسیم اکرم نے پی سی بی سے ویڈیو ڈیلیٹ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ’پی سی بی اس ویڈیو کو ڈیلیٹ کرے اور معافی مانگے`۔؟؟

اپنا تبصرہ بھیجیں